اردوئے معلیٰ

Search

حالتِ زار سے واقف ہے خطا جانتی ہے

رحمتِ سیدِ عالم کی ہوا جانتی ہے

 

کس کی زلفوں کی اسیری ہے ہماری منزل

رونقِ گلشنِ فردوس تُو کیا جانتی ہے

 

بس مرا کام یہی ہے کہ اَغِثْنِیْ کہہ دوں

آگے جانا ہے کہاں میری صدا جانتی ہے

 

موسمِ ابر نگاہوں میں بلا غرض نہیں

چشمِ تر ذکرِ مدینہ کو بڑا جانتی ہے

 

دیکھ کر اُس کو مرے دل کو سکوں ملتا ہے

مرض میرے کو بہت خاکِ شفا جانتی ہے

 

کون ہے دینِ محمد کا محافظ اب بھی

یا خدا جانے ہے یا کرب و بلا جانتی ہے

 

ہے روا اُس کیلئے اپنی کثافت کا گلہ

جسمِ اطہر کی لطافت کو ہوا جانتی ہے

 

اس سے بڑھ کر تو تبسم کا کوئی فخر نہیں

شاعرِ نعت ہوں اور اُن کی عطا جانتی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ