اردوئے معلیٰ

Search

حامل جلوہء ازل، پیکر نور ذات تو

شان پیمبری سے ہے سرور کائنات تو

 

فیض عمیم سے ترے قلب و نظر کی وسعتیں

مومن حق پرست کا حوصلہء نجات تو

 

تیرے عمل کے درس سے گرم ہے خون ہر بشر

حسن نمود زندگی رنگ رخ حیات تو

 

عقدہ کشائے این و آں ، نور فزائے ہر مکاں

قبلہء اہل دل ہے تو رونق شش جہات تو

 

شان بشر کا منتہا ، خالق دہر کا حبیب

مرد خدا پرست کا آئینہ حیات تو

 

مورد التفات ہم تیری نوازشات سے

ذات خدائے پاک سے وقف نوازشات تو

 

قلب و نظر کے راز سب دہر پہ منکشف ہوئے

روح جہاں راز تو، جان مکاشفات تو

 

مدح سرائے مصطفی ہے تو عمل بھی چاہیے

عرش جو ہوسکے تو ہو عزم میں پُرثبات تو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ