اردوئے معلیٰ

حبیبِ کبریا سایہ کُناں ہو

حبیبِ کبریا سایہ کُناں ہو

تو مجھ سا بے زباں معجز بیاں ہو

میں لکھوں نعت محبوبِ خدا کی

تو دُوری میں حضوری کا سماں ہو

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ