اردوئے معلیٰ

حرف در حرف اک دُعا ترا نام

حرف در حرف اک دُعا ترا نام

عشق کا پہلا مُعجزہ ترا نام

 

نارسائی کے عرش سے اُتر آ

ورنہ رکھ دیں گے ہم خدا ترا نام

 

صدیوں سوچی حروف نے ترتیب

تب کہیں لفظ میں ڈھلا ترا نام

 

قسمیں دے دے کے پوچھتے رہے لوگ

میں نے پھر بھی نہیں لیا ترا نام

 

مِٹ نہ پائے گا وقت کے ہاتھوں

لوح ِ دل پر لکھا ہوا ترا نام

 

ساری یادوں سے دل نشیں تری یاد

سارے ناموں سے دلرُبا ترا نام

 

دھیان کی خواب ناک وادی میں

رات بھر گونجتا رہا ترا نام

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ