حرف و بیانِ شوق سے یکسر فزوں ہے نعت

حرف و بیانِ شوق سے یکسر فزوں ہے نعت

اپنے خیالِ خام کو کیسے کہوں ہے نعت

 

لفظوں سے اور لہجوں سے ممکن نہیں نیاز

جاں سے فریب ، دل کے کہیں اندروں ہے نعت

 

آیاتِ نُور سے ہے ضیا یاب سطر سطر

اے جذب زاد حرفِ جنوں ! دیکھ ، یوں ہے نعت

 

اِک بے مثیل کیف ہو جیسے میانِ شوق

حیرت گہِ جنوں ہے ، کبھی خود جنوں ہے نعت

 

واللہ ، ایک موجِ تسلی ہے اُس کی رَو

واللہ ، ایک جملۂ جملہ سکوں ہے نعت

 

اِک بے شمار کیفِ مسلسل ہے سر بسر

اِک بے کنار وسعتِ جذبِ دروں ہے نعت

 

اِک نُور بار شام و سحر سے ہے مسنتیر

لا ریب عکسِ عرصۂ خیرِ قُروں ہے نعت

 

امکان میں نہیں ہے مگر چار سُو ہے نقش

وجدان سے فزوں کوئی قوسِ ظنوں ہے نعت

 

اُس کے بیانِ ناز میں ہیں حیرتیں تمام

یعنی نمودِ نقش گہِ کاف ، نوں ہے نعت

 

مقصودؔ ، میرے حرفِ تمنا کی خیر ہو

احساس میں دروں تو سخن سے بروں ہے نعت

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ