حسنِ معنویت میں حسنِ جاوداں حسّان

حسنِ معنویت میں حسنِ جاوداں حسّان

بعد ذاتِ احدیت پہلے نعت خواں حسّان

 

باغِ رب اکبر نے ایسا ُگل ِکھلایا ہے

تا ابد سجائیں گے تازہ گلستاں حسّان

 

لفط لفظ میں گویا شرح ُحسنِ یزداں ہے

منصبِ نبوت کے ایسے رازداں حسّان

 

جبریل بھی آکر دادِ فکر دیتے ہیں

شعریت کی دنیا میں ہیں وہ نکتہ داں حسّان

 

یادِ پاک آتے ہی ذہن جگمگا اُٹھا

نعت گو کا سورج ہیں حق کے ترجماں حسّان

 

خلد کی بہاریں بھی سن کے گنگناتی ہیں

مدح شاہِ شاہاں میں یوں ہیں نغمہ خواں حسّان

 

خوشہ چینی کر لینا بڑھ کے اے گنہ گارو

جلوہ گاہِ محشر میں جب ہوں ُگل فشاں حسّان

 

جذبۂ صبیحؔ الدین محوِ نعت ہے لیکن

آپ کی حضوری میں کیا ُکھلے زباں، حسّان

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ