حسیں رنگ بھاروں کا مسکن مدینہ

حسیں رنگ بھاروں کا مسکن مدینہ

محمد کے پیاروں کا مسکن مدینہ

 

کیا اک اشارا ھوا چاند ٹکڑے

ان چاند تاروں کا مسکن مدینہ

 

کروڑوں ھیں ھم جیسے آنکھیں بچھائے

ھم جیسے ساروں کا مسکن مدینہ

 

وھاں جا کے محسن مٹی بے قراری

ھم بے قراروں کا مسکن مدینہ

 

جھاں جبرائل آ کے جھکتے رھے ھیں

خوش بخت غاروں کا مسکن مدینہ

 

پتھر بھی کھا ئے نہ کی اف تلک بھی

ان بردباروں کا مسکن مدینہ

 

نبی کی جو مدحت میں ھیں محو محسن

ان قلمکاروں کا مسکن مدینہ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میری جانب بھی ہو اک نگاہِ کرم، اے شفیع الواریٰ، خاتم الانبیاء
کبھی کبھی یہ نظارہ بچشم تر آیا
اللہ ہو گر اُس کا ثنا گر ، نعت کہوں میں کیسے
لب پہ صلِ علیٰ کے ترانے اشک آنکھوں میں آئے ہوئے ہیں
منتظر تیرے سدا عقدہ کُشا رکھتے ہیں
شمع دیں کی کیسے ہو سکتی ہے مدہم روشنی
یاد
اک عالمگیر نظام
دل میں رہتے ہیں سدا میرے نبی​
ہیں سر پہ مرے احمدؐ مشکل کشا کے ہاتھ