اردوئے معلیٰ

حسیں رنگ بھاروں کا مسکن مدینہ

حسیں رنگ بھاروں کا مسکن مدینہ

محمد کے پیاروں کا مسکن مدینہ

 

کیا اک اشارا ھوا چاند ٹکڑے

ان چاند تاروں کا مسکن مدینہ

 

کروڑوں ھیں ھم جیسے آنکھیں بچھائے

ھم جیسے ساروں کا مسکن مدینہ

 

وھاں جا کے محسن مٹی بے قراری

ھم بے قراروں کا مسکن مدینہ

 

جھاں جبرائل آ کے جھکتے رھے ھیں

خوش بخت غاروں کا مسکن مدینہ

 

پتھر بھی کھا ئے نہ کی اف تلک بھی

ان بردباروں کا مسکن مدینہ

 

نبی کی جو مدحت میں ھیں محو محسن

ان قلمکاروں کا مسکن مدینہ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ