اردوئے معلیٰ

Search

حصارِ دہر ہے ذکر خدا سنبھالے ہوئے

کبھی سنبھلتا نہیں زلزلہ سنبھالے ہوئے

 

کسی ستون پہ ٹھہراؤ آسماں کا نہیں

مرے خدا کی ہے ابتک رضا سنبھالے ہوئے

 

وہ لفظ کُن سے جو چاہے وہ خلق فرمائے

رسول پاک ہیں اُس کی عطا سنبھالے ہوئے

 

یہ چاند تارے نظام فلک زمین و زماں

خدا کے بعد ہیں صل علیٰ سنبھالے ہوئے

 

رسول پاک گئے عرش پر شب معراج

ندائے حق تھی مکمل فضا سنبھالے ہوئے

 

خیال محو زیارت تھے جسم گھر میں رہا

اڑا کے لے گئی مجھ کو صبا سنبھالے ہوئے

 

عمل کی راہ سے انجم بھٹک نہیں سکتا

ہیں ہر قدم پہ شہہِ انبیاء سنبھالے ہوئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ