اردوئے معلیٰ

Search

حضور مجھ کو بھی بلوائیے خدا کے لئے

مرا نصیب بھی چمکائیے خدا کے لئے

 

حضور آپ کے دم سے ہے چراغاں ہرسُو

مجھے بھی راستہ دکھلائیے خدا کے لئے

 

حضور ایک بھکاری ہوں بے ادب حاضر

قبول مجھ کو بھی فرمائیے خدا کے لئے

 

ہیں آپ رب کے خزانوں کو بانٹنے والے
متاعِ سوز تو دے جائیے خدا کے لئے

 

درِ حضور ہی قبلہ ہے ازل سے لوگو

نہ اور کچھ مجھے سمجھائیے خدا کے لئے

 

حضور کیا مری اوقات پر کسی شب تو

میرے بھی خوابوں میں آ جائیے خدا کیلئے

 

مرے بھی قلب کی تسکین کا سامان کرو

بات کچھ زائرو سنائیے خدا کے لیے

 

کہو نہ شہرِ پیمبر ہے بہت دور شکیلؔ

یہ درد اور نہ بڑھائیے خدا کے لیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ