اردوئے معلیٰ

Search

حضور آئے بہاروں پر عجب رنگِ بہار آیا

حضور آئے رُخِ ہستی پہ اک تازہ نکھار آیا

 

حضور آئے مہ و خورشید تارے جگمگا اُٹھے

حضور آئے تو ہر ذرّہ مثالِ زر نگار آیا

 

حضور آئے تو خوشبوؤں کے نافے کھل گئے ہر سو

ہر اک کوچہ ہر اک قریہ مہکتا مشکبار آیا

 

حضور آئے تو انساں نے شعورِ زندگی پایا

تو پھر تہذیبِ انساں پر عروج و افتخار آیا

 

حضور آئے تو دنیا میں ہوا توحید کا غلبہ

ہوئے بت سرنگوں ایمان پر تازہ نکھار آیا

 

حضور آئے تو شاہوں کا طریقِ خُسروی بدلا

غلاموں کو بھی ہستی کا شعور و اعتبار آیا

 

حضور آئے تو جاگ اُٹھا بشر کا بختِ خوابیدہ

وہ نُورِ لم یزل ہر سمت سے ظلمت اتار آیا

 

حضور آئے سکوں پایا جہاں کے بے سکونوں نے

ضعیفوں بے نواؤں کو قرارِ صد قرار آیا

 

حضور آئے تو دھرتی نے قدومِ میمنت چومے

زمیں نے وہ شرف پایا فلک کو جس پہ پیار آیا

 

غلامی کی سند نوری ملے اے کاش محشر میں

کہیں جو شافعِ محشر وہ میرا جاں نثار آیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ