اردوئے معلیٰ

حق تعالی نے ترے شہر کی کھائی سوگند

جب تری بات چلی قصہ قسم تک پہنچا

 

مجھ سے پوچھے کوئی صحرائے مدینہ کی بہار

اس کے رتبے کو نہ گلزار اِرم تک پہنچا

 

ہوگا سرکار کا دیدار لحد میں اس کو

حسرتِ دید میں جو ملک عدم تک پہنچا

 

فکر دنیا غم عقبی نہیں اب اے اصغر

للہ الحمد میں آقا کے قدم تک پہنچا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات