اردوئے معلیٰ

Search

حلیفِ ظلمتِ شب تار ہم نہیں ہوں گے

سحر سے بر سرِ پیکار ہم نہیں ہوں گے

 

یہ خوابِ غفلت بیخود ہمیں گوارا ہے

فروغِ جبر میں بیدار ہم نہیں ہوں گے

 

ہمیں عزیز ہے حرمت جہادِ منزل کی

شریکِ کاوشِ بیزار ہم نہیں ہوں گے

 

کسی حریفِ ستمگر کی پیشوائی میں

شریکِ مجمع اغیار ہم نہیں ہوں گے

 

سجاؤ سر پہ کسی کے بھی تاجِ سلطانی

نقیبِ شوکتِ دربار ہم نہیں ہوں گے

 

جہاں میں عظمتِ کردار کے ہیں قائل ہم

قتیلِ گرمیء گفتار ہم نہیں ہوں گے

 

بکی ہے گرچہ حمایت ہماری ہر عنوان

رہینِ جبۂ و دستار ہم نہیں ہوں گے

 

اگر نہ بن سکے مظلوم کی سِپر نہ سہی

ستم کے ہاتھ میں تلوار ہم نہیں ہوں گے

 

اگر ہے قیمتِ گویائی درد کی تشہیر

تو پھر سے تشنۂ اظہار ہم نہیں ہوں گے

 

جمالِ خرقۂ درویشی ہے نظر میں ظہیرؔ

اسیر طرّۂ خمدار ہم نہیں ہوں گے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ