ذہن و دل ہوتے ہیں روشن آپ ﷺ ہی کے نام سے

 

ذہن و دل ہوتے ہیں روشن آپ ﷺ ہی کے نام سے

پھیلتی جاتی ہیں کرنیں آپ ﷺ کے پیغام سے

 

اُسوۂ ختم الرسل ﷺ سے عشق ہو تو کیوں نہ ہو

ایک صبحِ نو ہویدا زندگی کی شام سے

 

مندمل ہوتے ہیں دل کے زخم اُن ﷺ کی یاد میں

روح بھی تسکین پاتی ہے اُنہی ﷺ کے نام سے

 

ہے دریچے ذہن و دل کے اس طرف کھلنے کی دیر

روشنی اب صرف پھیلے گی اُنہی ﷺ کے بام سے

 

بس جہانِ آب و گِل میں اُن ﷺ کا دامن تھام لو

ہر زماں پھر زندگی کرتے رہو آرام سے

 

اُن ﷺ کی سیرت پر عمل کرتے ہوئے گزرے حیات

ہمکنار اس طرح سے ہو زندگی انجام سے

 

معتبر ٹھہرے مری ملت زمانے میں عزیزؔ

پھر مکمل جوڑ لے رشتہ اگر اسلام سے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جان ہیں آپؐ جانِ جہاں آپؐ ہیں
ہر موج ہوا زلف پریشانِ محمدؐ
رشکِ ایجاب تبھی حرفِ دعا ہوتا ہے
قصہء شقِّ قمر یاد آیا​
ہم گداؤں بے نواؤں کا سہارا آپ ہیں
گھڑی مڑی جی بھر آوندا اے ۔ پنجابی نعت
سرِّ توحید
جو عرش کا چراغ تھا میں اس قدم کی دھول ہوں
چمک جب تک رہی اعمال میں اُس پاک سیرت ﷺ کی
بے مثل ہے کونین میں سرکارؐ کا چہرہ