اردوئے معلیٰ

Search

حُسنِ شاہِ دو جہاں کی غیر ممکن ہے مثال

صاحبِ خُلقِ علا ہیں صاحبِ اوجِ کمال

 

وہ لبِ یُوحٰی کے مالک ہیں وہی شمس الضحٰی

اُن کی سیرت ہے کہ تفسیرِ کلامِ ذوالجلال

 

اُن کے قدموں کا ہی دھوون حسنِ باغِ خلد ہے

صاحبِ کوثر کی زلفِ نم سے ہے آبِ زُلال

 

صدقۂ آلِ عبا اور صدقۂ اصحاب دے

اور مجھے گردابِ عصیاں سے مرے مولا نکال

 

نور کی سرکار سے منسوب ہر شے نور ہے

نور ہیں ازواجِ آقا نور ہیں آل و عیال

 

ہر مہینے ماہِ کامل روشنی کے واسطے

ابروئے شہ کو سلامی دیتا ہے بن کر ہلال

 

ہے رفعنا کی رسد فَلْیَفْرَحُوْا کی ہے سند

ذکرِ شاہِ دوجہاں ہے بے مثال و لازوال

 

وہ درِ خیر البشر درماں ہے ہر اک درد کا

اُس درِ خیر الورٰی سے دور ہوتا ہے ملال

 

منبعِ جملہ محاسن ہیں وہ ہیں جانِ کرم

رحمتہ اللعٰلمیں ہیں صاحبِ جملہ جمال

 

حشر کا منظر ہے کوئی سایۂ رحمت نہیں

آ مرے والی ، مرے وارث مرے اے لاج پال

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ