حُسَین

شاہِ جوانانِ خلُد، بادشہِ مشرقَین

لختِ دلِ مُصطفٰے یعنی ھمارے حُسَین

اُن کا مکمل وجُود نُورِ نبی کی نمُود

اُن کا سراپا تمام عشقِ حقیقی کی عَین

ماں ھیں جنابِ بتُول، بنتِ رسولِ کریم

باپ ھیں شیرِ خُدا، فاتحِ بدر و حُنَین

 

اُن کا امَر مُعجزہ سوز و غمِ کربلا

آج بھی ھے گریہ ناک چشمِ نمِ کربلا

 

اصلِ سخا، عینِ حق، رُوحِ وفا، جانِ عشق

اسمِ امامِ حُسَین چشمۂ فیضانِ عشق

فیض تو دیکھو ذرا نسبتِ مولائی کا

بن گئے اُن کے غُلام خاصۂ خاصانِ عشق

جن کو نہیں مل سکی جائے اماں کوئی بھی

پہنچے درِ شاہ پر ھوگئے مہمانِ عشق

 

مرجعِ عُشّاق ھے آپ کا در، یا حُسَین

فارسِ خستہ پہ بھی ایک نظر، یاحُسَین

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

عظمت کے آسماں پہ اجارہ علیؓ کا ہے
نہیں خوش بخت محتاجانِ عالم میں کوئی ہم سا
سلامی مدحتِ شہ میں بڑی تاثیر ہوتی ہے
حسین ابن علیؓ صبر و رِضا کا آئینہ ہیں
درِ زہرا پہ ہے نظر اپنی
مظہر حسنِ یقیں ہیں سیدی نواب شاہ
چُپ رھیں ؟ آہ بھریں ؟ چیخ اُٹھیں ؟ یا مرجائیں ؟
اِدھر اُدھر کہیں کوئی نشاں تو ھوگا ھی
مَیں لے اُڑوں گا ترے خدوخال سے تعبیر 
برسوں سنبھالی لب پہ ترے ذائقے کی یاد