حیرت ہے سرِ دار جو مصلوب رہا ہے

حیرت ہے سرِ دار جو مصلوب رہا ہے

اس شخص کا ہر داؤ بہت خوب رہا ہے

 

آج اس کی خموشی پہ نہ تم انگلی اٹھاؤ

سنتے ہیں کہ وہ صاحبِ اسلوب رہا ہے

 

اب وقت نے سب نقش بگاڑے ہیں وگرنہ

یہ شہر مرے حُسن سے مرعوب رہا ہے

 

اے چھوڑے ہوئے شخص مجھے دکھ ہے کہ تجھ سا

کم ظرف مرے نام سے منسوب رہا ہے

 

ہے اور کوئی کارِ اذیت تو بتاؤ

کیا ہے کہ مرا عشق سے جی اوب رہا ہے

 

اترا ہے ترے ہجر کا سیلاب رگوں میں

دل آج کراچی کی طرح ڈوب رہا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ