اردوئے معلیٰ

Search

خاطرِ بے آرزو از رنجِ یار آسودہ است

خارِ خشک از منتِ ابرِ بہار آسودہ است

 

جس دل میں کوئی آرزو نہ ہو وہ دل رنجِ یار سے

فارغ اور آسودہ ہوتا ہے، جیسے کہ خشک کانٹا

بہار کے بادل کے احسانوں سے بے نیاز ہوتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ