خال و خدِ حیات ، تریسٹھ برس کی بات

خال و خدِ حیات ، تریسٹھ برس کی بات

ہے وجہِ ممکنات تریسٹھ برس کی بات

 

پہلے تھی قوم و قریہ کے خانوں میں منقسم

اب ہے ابد کی بات تریسٹھ برس کی بات

 

اُس کے سبب ہیں جملہ شرَف بار سلسلے

ہے حُسنِ کائنات تریسٹھ برس کی بات

 

اِک بات ہے کہ جس کی بہَر سُو شُنید ہے

آوازِ شش جِہات تریسٹھ برس کی بات

 

ہے منعکس اسی زمانوں کا نقشِ نَو

روحِ مشاہدات تریسٹھ برس کی بات

 

اہلِ گماں کو دعوتِ ایقانِ تام ہے

ہے حلِ مُشکلات تریسٹھ برس کی بات

 

شانِ کمالِ عرصۂ خیرُالقروں تو دیکھ !

عینِ کلامِ ذات تریسٹھ برس کی بات

 

مُعجِز ہے حرف و صورت کے جملہ وفور کی

ہے جانِ مُعجزات تریسٹھ برس کی بات

 

منظر تمام جلوہ گہِ حُسنِ لم یزل

اوجِ تجلیات تریسٹھ برس کی بات

 

ہے مرکزِ جمال و کمالِ نشانِ خَلق

ہے محورِ صفات تریسٹھ برس کی بات

 

مقصودؔ میرے نُطق کا قبلہ حضور ہیں

رہتی ہے بات تریسٹھ برس کی بات

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ