خداوندا محمد مصطفیٰ کے ابرِ رحمت کو

خداوندا محمد مصطفیٰ کے ابرِ رحمت کو
مری ہسـتی پہ برسا دے
حُدی خوانی سے رستے سہل ہو جائیں
نسیم صبح جب شاخوں کو جھولا دے
مرے نغمے شفاعت کا وسیلہ ہوں
مجھے صدقِ ابوبکرؓ و علیؓ دے دے
عمر فاروقؓ کا جذبہ عنایت ہو
حیائے حضرتِ عثماںؓ نگاہوں کو بدل ڈالے
بصیری کی ردائے پاک کا سایہ ملے مجھ کو
میں اپنے دور کی تاریکیوں کو دور کر جاؤں
قلم کے ساتھ اپنے علم و دانش سے
محمد مصطفیٰ کے نور کو نغموں سے پھیلاؤں
ترے دینِ مبیں کو وُسعتِ عالم میں پھیلاؤں
عمل میرا نشانِ راہِ منزل ہو
مرا بچہ رسولِ پاک کا نقش بن کر
ہماری ناتمامی کو مٹا ڈالے
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ