اردوئے معلیٰ

Search

خداوندِ جہاں، آقا و مولا

خداوندِ زماں، آقا و مولا

 

’’عطا اسلاف کا جذبِ دروں کر‘​‘​

وہی سوزِ نہاں، آقا و مولا

 

’’چہ نسبت خاک را با عالمِ پاک‘​‘​

کہاں تُو، میں کہاں، آقا و مولا

 

ترے محبوب کی اُمت کا پرچم

رہے عظمت نشاں، آقا و مولا

 

رہے سایہ کناں اُمت کے سر پر

کرم کا سائباں، آقا و مولا

 

مگن کرّوبیاں تیری ثنا میں

طیور و انسِ و جاں، آقا و مولا

 

ظفرؔ کو ہو عطا زورِ قلم بھی

عطا زورِ بیاں، آقا و مولا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ