اردوئے معلیٰ

خدایا مطلعِ موزوں ہے نظمِ کُن فکاں تیرا

خدایا مطلعِ موزوں ہے نظمِ کُن فکاں تیرا

فغانِ سازِ ہستی شورِ مرغ صبح خواں تیرا

 

وجودِ دوزخ و جنت گزرگاہِ حق و باطل

قیودِ مذہب و ملت طلسم امتحاں تیرا

 

شہود ہستیِ اشیا نقابِ عارضیِ معنی

ظہور ہر دو عالم پردۂ رازِ نہاں تیرا

 

کمندِ خاطر عشاق تیرا لطفِ بے پایاں

کمیں گاہِ نگاہِ عشق حسنِ بے نشاں تیرا

 

رموزِ ممکن و واجب کیا جھگڑے میں ڈالا ہے

نہ مجھ پر ہو یقین میرا نہ تجھ پر ہو گماں میرا

 

نہ یاں اصرار جنت پر نہ یاں انکار دوزخ کا

یہاں بھی تو وہاں بھی تو مکیں تیرے مکاں تیرا

 

امیرؔ و محسنِؔ خوش گو کا ہمسر گو نہیں لیکن

زہے قسمت کہ بیخودؔ ہے تو آخر حمد خواں تیرا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ