اردوئے معلیٰ

خدایا میں کروں تیری ثنا اول سے آخر تک

کہاں ممکن، کروں میں حق ادا اول سے آخر تک

 

مرے اعمال کب ہیں عفو کے قابل مرے مولیٰ

تری رحمت کی ہو مجھ پر ردا اول سے آخر تک

 

سنا ہے حشر میں شان کریمی کام آئے گی

بس اک امّید ہے روز جزا اول سے آخر تک

 

یقیناً لوح بھی تیری قلم تیرا جہاں تیرا

مجھے مل جائے بس تیری رضا اول سے آخر تک

 

شریعت ہو طریقت ہو کہ ہو وہ معرفت یارب

بصیرت کی نظر تو کر عطا اول سے آخر تک

 

کروں میں بندگی تیری دعا مانگوں تو بس تجھ سے

خدایا بخش خوشدلؔ کی خطا اول سے آخر تک

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات