خدا کا ذکر، ذکرِ دل کشا ہے

خدا کا ذکر، ذکرِ دل کشا ہے

خدا کا ذکر، ذکرِ جانفزا ہے

خدا گر دل میں یاد اپنی بسا دے

خدا کا ہے کرم اُس کی عطا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جس دل میں نور عشق ہے ذات الہ کا
تجھی سے التجا ہے میرے اللہ
ترے کرم تری رحمت کا کیا حساب کروں
خدا ہے حامی و ناصِر ہمارا
فرشتہ تو نہیں انسان ہوں میں
کرم فرما خدا کی ذاتِ باری
مُنور ہر زماں نور خدا سے
جلال کبریا کی مظہر و عکاس ہے ساری خدائی
نہیں ہے مہرباں کوئی خدا سا
خطائیں تو ہماری معاف فرما کہ تو ستّار بھی غفار بھی ہے

اشتہارات