خدا کا فیض جاری ہر جہاں میں

خدا کا فیض جاری ہر جہاں میں

فضاؤں میں، زمین و آسماں میں

ہر اک گلشن، چمن، ہر گلستاں میں

ظفرؔ ہر شش جہت، کون و مکاں میں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جبیں میری ہے اُنؐ کا آستاں ہے
نہیں اُنؐ سا زمین و آسماں میں
میں تیرا فقیر ملنگ خدا
تو اعلیٰ ہے ارفع ہے کیا خوب ہے​
اے میرے مولا، اے میرے آقا، بس اپنے رستے پہ ڈا ل دے توُ
جانوں ترا جلال سنہرے ترے اصول
خداوندا! مرا دل شاد کر دے
کرے آباد گھر سُنسان میرا
محبت خلق سے رب العلیٰ کی
میں عاصی پُر خطا ہوں اور تو ستّار بھی غفار بھی ہے