اردوئے معلیٰ

Search

خدا کے ذکر کا طاہرؔ اثر ہے

بہت مہکا ہوا دل کا نگر ہے

 

اُسی کا حکم چلتا ہے ہوا پر

اُسی کے حکم سے شام و سحر ہے

 

چلے آؤ خدا کے گھر کی جانب

یہی اک کامیابی کی ڈگر ہے

 

خدا کے سامنے پیشی بھی ہوگی

کسی کو کب کوئی راہِ مَضر ہے

 

خدا کی راہ میں جو مارا جائے

وہی مردِ مجاہد تو اَمَر ہے

 

منافق پر خدا کی مار ہر دم

زبان و دل میں یہ اپنے دِگر ہے

 

خدا جس پر کرم فرمائے بے شک

اُسے پھر کیا کوئی خوف و خطر ہے

 

حجِ مبرور کی خواہش ہے مجھ کو

دعا میری ہے اور بابِ اثر ہے

 

حضورِ حق کے رستے سے ہٹا جو

اُسے ہر راہ میں خوف و خطر ہے

 

ترے بندوں کا خدمت گار ہے جو

اُسے حاصل عنایت کا ثمر ہے

 

جہاں سے رزق سب ہی پارہے ہیں

مرے مولا! ترا وہ پاک در ہے

 

خدا کا تحفہ ہے یہ پاک دھرتی

مری دھرتی بہت ہی معتبر ہے

 

چلا ہوں جانبِ مکہ مدینہ

بڑا ہی معتبر طاہرؔ سفر ہے

 

خدا راضی تو سارا جگ ہے راضی

اے طاہرؔ مجھ کو بس اتنی خبر ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ