اردو معلی copy
(ہمارا نصب العین ، ادب اثاثہ کا تحفظ)

خدا کے سامنے سر کو جھکا دو

خدا کے سامنے سر کو جھکا دو

اذاں سلطانِ جابر کو سنا دو

 

رواں ہوں قافلے کعبہ کی جانب

صنم جو راستا روکیں گرا دو

 

منافق جو تمھارے درمیاں ہیں

نشاں تم اُن کو عبرت کا بنا دو

 

کوئی خائن ہو غاصب حکمراں ہو

اُسے تم جاہ و منصب سے ہٹا دو

 

ملے راہی جو کوئی بھولا بھٹکا

صراطِ مستقیم اُس کو دکھا دو

 

خدا سے ہر کسی کی خیر مانگو

دعا مانگو، کبھی نہ بددعا دو

 

ظفرؔ مانگے خدا سے گڑ گڑا کر

خدا را عشقِ محبوبِ خداؐ دو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

تُوں دُنیا دے باغ دا
خدا ہے روشنی جھونکا خدا ہے
پُر لطف زندگی ہے مری لاجواب ہے
اسم اللہ، میری جاگیر
اذانوں میں صلوٰتوں میں، خدا پیشِ نظر ہر دم
خدا کی ذات پر ہر انس و جاں بھی ناز کرتا ہے
خدا موجود ہر سرِ نہاں میں
خداوندِ شفیق و مہرباں تو
خدا کا نام میرے جسم و جاں میں
خدائے پاک کا فیض و عطا جاری و ساری ہے