اردوئے معلیٰ

Search

خرد ہُشیار ہو جائے انا بیدار ہو جائے

کچھ ایسے حادثہ سے دل مرا دوچار ہو جائے

 

قیامت جھیلنے کو پہلے دل تیار ہو جائے

کرے پھر آرزو اس حسن کا دیدار ہو جائے

 

ہجومِ غم کی یورش بے اثر بے کار ہو جائے

نہ خود احساسِ دل گر در پئے آزار ہو جائے

 

سیہ خانہ یہ دل قندیلِ صد انوار ہو جائے

اگر ان کی توجہ کی نظر اک بار ہو جائے

 

میں ایسی زندگی پر موت کو ترجیح دیتا ہوں

سکوں سے سانس لینا تک بھی جب دشوار ہو جائے

 

نشاطِ زندگی منت پذیرِ مرگ ہے یعنی

نہ مرنا ہو تو جینے ہی سے دل بیزار ہو جائے

 

دلِ ویراں کی ویرانی مجھے تسلیم ہے لیکن

ابھی تم اک نظرؔ ڈالو یہی گلزار ہو جائے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ