خطا کاروں کا تُو ستار بھی ہے

خطا کاروں کا تُو ستار بھی ہے

گنہگاروں کا تُو غفار بھی ہے

تہی دستوں کا پالن ہار بھی ہے

دلِ بیمار کا دل دار بھی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ہر طرف کائنات میں تم ہو
تُوں دُنیا دے باغ دا
گل میں خوشبو تری، سورج میں اجالا تیرا
نبی سے عشق میں روشن کیے اللہ نے میرے
اسم اللہ، میری جاگیر
اذانوں میں صلوٰتوں میں، خدا پیشِ نظر ہر دم
خدا کے ذکر سے دل مطمئن ہیں، خدا کے ذکر سے مسرور جاں ہے
سبھی آفاق سے وہ ماوراء ہے
خدا نے کی عطا اپنی محبت
عبادت ہو خُدا کی اِس ادا سے

اشتہارات