اردوئے معلیٰ

Search

خلقتِ شہر بھلے لاکھ دُھائی دیوے

قصرِ شاھی کو دکھائی نہ سُنائی دیوے

 

عشق وہ ساتویں حِس ھے کہ عطا ھو جس کو

رنگ سُن جاویں اُسے ، خوشبو دکھائی دیوے

 

ایک تہہ خانہ ھُوں مَیں اور مرا دروازہ ھے تُو

جُز ترے کون مجھے مجھ میں رسائی دیوے

 

ھم کسی اور کے ھاتھوں سے نہ ھوں گے گھائل

زخم دیوے تو وھی دستِ حنائی دیوے

 

تُو اگر جھانکے تو مجھ اندھے کنویں میں شاید

کوئی لَو اُبھرے ، کوئی نقش سجھائی دیوے

 

پتّیاں ھیں ، یہ سلاخیں تو نہیں ھیں فارس

پھول سے کہہ دو کہ خوشبو کو رھائی دیوے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ