اردوئے معلیٰ

Search

خواب آنکھوں میں کئے ایسے کسی نے روشن

بحر ظلمت میں رواں جیسے سفینے روشن

 

چند لمحے جو ترے نام کے مل جاتے ہیں روز

اُن کے دم سے ہیں مرے سال مہینے روشن

 

کسی جلوے کی کرامت ہے یہ چشم بینا

کسی دہلیز کا احسان جبین روشن

 

میرے اشکوں میں عقیدت کے جہاں ہیں آباد

آنکھ میں رہتے ہیں کچھ مکّے مدینے روشن

 

ہاتھ محنت کے ملیں، آنکھ محبت کی اگر

تبھی کرتی ہے زمین اپنے خزینے روشن

 

یوں تو دنیا نے جلائے کئی پانی پہ چراغ

دیپ کاغذ پہ کئے ایک ہمی نے روشن

 

شب کدہ رشکِ چراغاں ہے کہ جس میں ہر سُو

ہو گئے تیری محبت کے قرینے روشن

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ