اردوئے معلیٰ

خوشا کہ دیدہ و دل میں ہے جائے آلِ رسول

زہے کہ وردِ زبان ہے ثنائے آلِ رسول

 

اساسِ دینِ مبیں ہے وِلائے آلِ رسول

جو سچ کہوں تو ہے ایماں عطائے آلِ رسول

 

لئے ہے دامنِ دل میں عطائے آلِ رسول

تونگروں سے غنی ہے گدائے آلِ رسول

 

بہشت و کوثر و جامِ طہور کی ضامن

صدائے آلِ محمد، نوائے آلِ رسول

 

میں بُوترابی ہوں مجھ کو ملی ہے حبِ علیؓ

مرا وظیفہ ہے مدح و ثنائے آلِ رسول

 

یہ کیا مقامِ محبت ہے ، کون سی منزل؟

جبینِ شوق ہے اور نقشِ پائے آلِ رسول

 

شہانِ دہر کا دریوزہ گر خدا نہ کرے

بڑے مزے سے ہوں زیر لوائے آلِ رسول

 

سرشکِ دیدہء خوننابہ بار کیا ، دل کیا؟

ہزار جانِ گرامی فدائے آلِ رسول

 

وہیں وہیں دلِ دیوانہ لوٹ لوٹ گیا

جہاں جہاں بھی ملا نقشِ پائے آلِ رسول

 

نفس نفس نئی کیفیتوں کا عالم ہے

نفس نفس میں ہے بوئے ولائے آلِ رسول

 

خوشا نصیب دوعالم میں ہے لقب میرا

فقیرِ کوئے مدینہ ، گدائے آلِ رسول

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات