اردوئے معلیٰ

خوشبو اُتر رہی ہے مرے جسم وجان میں

کیا لطف آ رہا ہے سحر کی اذان میں

 

مجھ کو ملی امان ہے جس گلستان میں

صدقے کروں میں جان اسی آستان میں

 

میں نے وہیں پہ سجدہ الفت ادا کیا

جس گھر میں آپ عرش سے آئے جہان میں

 

اللہ اے اوج و مرتبہ میرے حضور کا

مہماں ہوئے وہ عرش کے اعلیٰ مکان میں

 

میرا مشّامِ نعتِ نبی سے ہے ضوفشاں

رحمت ہے ان کی سایہ فگن میری جان میں

 

سب مسئلے حضور نے سلجھا دیے مرے

جاں آگئی ہے میرے سخن کی اُڑان میں

 

احمر پہ آج کتنا کرم ہے حضور کا

پھر آگیا ہے آپ کے دارالامان میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات