اردوئے معلیٰ

خوشبو گلاب میں خوش، پتّا شجر میں خوش ہے

 

خوشبو گلاب میں خوش ، پتّا شجر میں خوش ہے

جو بھی ہے اپنے اپنے دیوار و در میں خوش ہے

 

پیروں پہ جو کھڑا ہے ، یہ ہے زمین اُس کی

ہے آسمان اُس کا ، جو بال و پر میں خوش ہے

 

یہ ہجر کون جانے ، یہ بات کون سمجھے

میں اپنے گھر میں خوش ہوں وہ اپنے گھر میں خوش ہے

 

تُو ہی بتا محبت ، یہ بھی کوئی خوشی ہے

یہ دل مِرا اکیلا ، اس شہر بھر میں خوش ہے

 

جتنے بھی ہیں مسافر سب کے اصول الگ ہیں

کوئی قیام میں اور کوئی سفر میں خوش ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ