خُدائے زمان و مکاں ! الاماں

ابرِ زحمت

خُدائے زمان و مکاں ! الاماں

زمینوں کے درپَے ھُوا آسماں

 

ذرا بارشوں کو جو آیا جلال

ھُوئے مسخ دھرتی کے سب خدّوخال

 

کچھ ایسے غضب ناک جھکّڑ چلے

درختوں سے گُل پات سب جھڑ چلے

 

مکانوں کی دُشمن جب آندھی ھُوئی

کُھلی ایک اک چیز باندھی ھُوئی

 

ھَوا کو ھُوا میری گلیوں سے بَیر

مِری بستیوں کے چراغوں کی خَیر

 

اِنہی بستیوں میں تھیں کچی کئی

سو جس پر ذرا ابر برسا، گئی

 

بہت سے گھروں والے بے گھر ھُوئے

جو بے گھر تھے، گلیوں کے کنکر ھُوئے

 

سُنے کون بُوڑھے کسانوں کا دُکھ

جواں سال گندُم کے دانوں کا دُکھ

 

الٰہی ! یہ جو رزق ھے، گُم نہ ھو

اس آندھی میں قُربان گندُم نہ ھو

 

نہ ھو رائیگاں سال بھر کا اناج

کسانوں کی محنت کی رکھ لے تُو لاج

 

تُجھے واسطہ بس مدینے کا ھے

کہ فصلوں پہ پھل خوں پسینے کا ھے

 

وہ بارش نہ برسے جو رحمت نہ ھو

دُعا میری سُن لے جو زحمت نہ ھو

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ