اردوئے معلیٰ

خیالِ شہرِ کرم سے یہ آنکھ بھر آئے

خیالِ شہرِ کرم سے یہ آنکھ بھر آئے

جو عکسِ گنبدِ اخضر کہیں نظر آئے

 

مچل کے ہجر کے بندے کا دل کرے فریاد

کرم ہو کاسہ بہ کف آپ کے نگر آئے

 

بس ایک میم ہی لکھا تھا بہرِ نعتِ نبی

حروف جیسے ورق در ورق نکھر آئے

 

دعاے خیر تھی ڈھارس جو عشق کے بندے

پُلِ صراط سے اک جست میں گزر آئے

 

بہ فیضِ محفلِ میلاد میرے آنگن میں

فلک سے جیسے ہر اک ،کہکشاں اُتر آئے

 

وہ دیکھ لیں جو کبھی ایک بار میری طرف

بغیر عرض مری ہر مراد بر آئے

 

میں کب سے دیکھ رہا ہوں رہِ شہا یا رب

کبھی تو اذن ملے کوئی نامہ بر آئے

 

یہ لازمی ہے درِ خیر پر ہر اک زائر

حضورِ شاہِ مدینہ بہ چشمِ تر آئے

 

درود اُن کا لبوں پر سجائے بیٹھا ہوں

نہ جانے کب کوئی مصرع ثنا کا در آئے

 

جبینِ عجز کیے خم ہے آرزو منظر

دیارِ شاہِ مدینہ میں سر بسر آئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ