اردوئے معلیٰ

Search

خیرات مرے حرفوں نے پائی ترے در کی

کرتے ہیں سدا مدح سرائی ترے در کی

 

یہ مدح و ثنا صوت و صدا شعر و ادب سب

یہ اذن و عطا خاص کمائی ترے در کی

 

ججتی ہی نہیں قصرِ شہی اس کی نظر میں

قدرت نے جسے راہ دکھائی ترے در کی

 

چمکے گی مری خاکِ لحد اس کے اثر سے

یہ خاک جو ماتھے پہ لگائی ترے در کی

 

لاتا نہیں خاطر میں وہ شاہانِ زمن کو

’’ ہے جس کے مقدر میں گدائی ترے در کی ‘‘

 

سینے میں اُتر آئے ترا نور سراپا

تصویر ہے آنکھوں میں سجائی ترے در کی

 

یوں ہی تو فروزاں نہیں مہر و مہ و اختر

خیرات اجالوں نے بھی پائی ترے در کی

 

جبریل چلے آتے تھے سدرہ سے اتر کر

کیا ذوق تھا کیا دُھن تھی سمائی ترے در کی

 

ہر پھول ہوا دستِ بہاراں سے معطّر

خوشبو جو صبا خیر سے لائی ترے در کی

 

یہ طلعتِ کونین ترے رُخ کا تصدق

یہ حسنِ جہاں جلوہ نمائی ترے در کی

 

مدحت سے ہوا کلبۂ جاں خوب منوّر

جب یاد مہکتی ہوئی آئی ترے در کی

 

امّت پہ تری آج ہے آلام کی یورش

دل دیتا ہے سرکار ! دہائی ترے در کی

 

بو صیری و جامی کے وسیلے سے ظفر بھی

رکھتا ہے تمنّائے گدائی ترے در کی

 

اے کاش نصیر آج کریں میری سفارش

’’پلکوں سے کیے جاؤں صفائی ترے در کی‘‘

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ