اردوئے معلیٰ

Search

خیر خو ہے امن زا ہے در ترا جانِ زمن

ہے مدینہ نازشِ اختر ترا جانِ زمن

 

بھیجتا ہے رب ہی تیری شان کے شایاں درود

ذکر ہے یوں عرش کے اُوپر ترا جانِ زمن

 

زندگی میں زندگی کے رنگ بھی شام و سحر

بھر رہا ہے گنبدِ اخضر ترا جانِ زمن

 

روزِ محشر ہم کہاں جاتے کہاں چھپتے بھلا

ملجٰی و ماوٰی نہ پاتے گر ترا جانِ زمن

 

خاندانِ نور میں شامل ہیں جملہ اُمّہات

سیّدہ، حسنین اور حیدر ترا جانِ زمن

 

چاند جس کے سامنے ہے ماند ایسی روشنی

دے رہا ہے چہرۂ انور ترا جانِ زمن

 

دیکھ لیں گر اک نظر تو قبضۂ کافر میں بھی

ذکر کرتا ہے ہر اک کنکر ترا جانِ زمن

 

قاسمِ نعمات ہے تو قاسمِ کثرت توئی

ذکر ہے بر سورۂ کوثر ترا جانِ زمن

 

گونجتی ہے جسم و جاں میں بس صدا لبیک کی

جسم کیا ہے جان کیا ہے سر، ترا جانِ زمن

 

جاں گُسِل لمحات ہیں زیرِ لواء تھوڑی جگہ

مانگتا ہے حشر میں منظر ترا جانِ زمن

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ