اردوئے معلیٰ

دار و مدارِ حاضری تیری رضا سے ہے

 

دار و مدارِ حاضری تیری رضا سے ہے

حرف و بیانِ شوق بھی تیری عطا سے ہے

 

آنکھوں سے چُومتا ہُوں ترا گنبدِ جمیل

اِس کا جمال و نور ترے نقشِ پا سے ہے

 

صدیوں کے فاصلے میں بھی ہے یوں ہی سر بلند

نسبت تمھاری نعت کی تو خودخُدا سے ہے

 

شُکرِ خُدا کہ ہُوں رہِ حسّاں پہ گامزن

آغازِ نطق میرا بھی صلّ علیٰ سے ہے

 

کاسہ بکف ہوں ان کے درِ خیر پر کھڑا

اک واسطہ مرا بھی شہِ دوسرا سے ہے

 

روشن ہے ان کی نعت سے آئینۂ خیال

آنکھوں میں روشنی رخِ خیر الوریٰ سے ہے

 

منظرؔ ! میں ہوں علی کا کوئی کیا دبائے گا

میرا تمام سلسلہ شیرِ خُدا سے ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ