اردوئے معلیٰ

Search

درونِ کعبہ ہوا ہے لوگو ظہور جس کا علی علی ہے

جو آنکھ کھولی تو سب سے پہلے نبی کو دیکھا علی علی ہے

 

ہے شہرِ علمِ نبی کا رستہ درِ علی سے جو ہو کے گزرے

تبھی تو علمِ نبی کے پیاسوں کے لب پہ نعرہ علی علی ہے

 

نبی نے حیدرؓ کا ہاتھ تھامے غدیرِ خم پر جو کہہ دیا تھا

کہ جس بھی مومن کا میں ہوں مولا، اسی کا مولا علی علی ہے

 

وہ رات ہجرت کی پُر خطر تھی کہ ہر طرف تھا عدو کا پہرا

اجل کی آنکھوں میں آنکھ ڈالے سکوں سے لیٹا علی علی ہے

 

نظامِ فطرت بدل گیا تھا جو عصر ان کی قضا ہوئی تھی

کہ جن کی خاطر وہ ڈوبا سورج پلٹ کے آیا علی علی ہے

 

ہر اک صحابی کو دوسرے کا بنایا بھائی مرے نبی نے

تو دو جہاں میں اگر کسی کو اخی بنایا علی علی ہے

 

نہ توڑ پایا تھا جس کو لشکر جہاں نے دیکھا وہ بابِ خیبر

وہ ایک پنجے کے زور سے ہی اکھاڑ پھینکا علی علی ہے

 

غرور و نخوت میں ڈوبا مرحب جو آگیا تھا ترے مقابل

وہ جس نے اس پُر غرور کا سب غرور توڑا علی علی ہے

 

مرا تعارف بھی عبدِوُد ہے سو میں لڑوں گا فقط علی سے

چڑھے جو سینے پہ اس کے حیدرؓ سمجھ میں آیا علی علی ہے

 

مراتب ان کے جلیل اپنی سمجھ میں آئیں تو کیسے آئیں

نبیٔ رحمت کی شفقتوں نے جنہیں ہے پالا علی علی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ