اردوئے معلیٰ

Search

درُود اُن پر سلام ہیں بے شُمار بیشک

اُنہی کے دم سے ہے زِیست یہ پُر بہار بیشک

 

ہمارا اعزاز ہے کہ ہم اُن کے اُمّتی ہیں

تمام نبیوں میں جن کو ہے اِفتخار بیشک

 

کبھی تو ہم کو بھی حاضری کا شرف ملے گا

ہمیں مدِینے میں آ کے ہو گا قرار بیشک

 

نہیں ھے دنیا کی اور دولت کی چاہ یاربّ

عطا ہو عشقِ نبی کا ہم کو بُخارِ بیشک

 

خُود اپنے پاؤں پہ زخم سہنا گوارا کر لے

خلل سُکُوں میں نہ آنے دے اُن کا یار بیشک

 

نہیں ہیں اسباب کوئی حج کے، مگر ہے آقا

ہمیں بُلاوے کا ہے فقط اِنتظار بیشک

 

رُخِ مُنّور کے نُور سے ہیں اُجالے سارے

اُنہیں کی زُلفوں کے دم سے لیل ونہار بیشک

 

وہ جِس کے صدقے میں سب کی بِگڑی بنی ہمیشہ

اُسی وسِیلے سے ربّ کو بندے! پکار بیشک

 

لِپٹ کے جالی سے حالِ دِل جب کہیں گے حسرتؔ

بہیں گے آنکھوں سے اشک بھی در قطار بیشک

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ