’’درِ احمد پہ اب میری جبیٖں ہے‘‘

 

’’درِ احمد پہ اب میری جبیں ہے‘‘

مجھے بخشش کا اب اپنے یقیں ہے

تصور میں مرے وہ دل نشیں ہے

’’مجھے کچھ فکرِ دو عالم نہیں ہے‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ