اردوئے معلیٰ

درِ نبی پہ مقدر جگائے جاتے ہیں

درِ نبی پہ مقدر جگائے جاتے ہیں

جو کام بنتے نہیں بنائے جاتے ہیں

 

نبی کے در پہ کبھی مانگنا نہیں پڑتا

یہاں تو جام نظر سے پلائے جاتے ہیں

 

نگاہِ ساقی کوثر کا یہ کرشمہ ہے

کہ مست کرنے سے پہلے اٹھائے جاتے ہیں

 

قسم خدا کی وہ ویراں کبھی نہیں ہوتا

نبی کی یاد سے جو دل بسائے جاتے ہیں

 

مرے حضور کی محفل کو جو سجاتے ہیں

انہیں بہشت کر مژدے بنائے جاتے ہیں

 

مرے کریم کی بندہ نوازیاں دیکھو

کہ مجھ سے عاصی بھی در پر بلائے جاتے ہیں

 

دیئے دلوں میں جو روشن ہیں عشق احمد کے

جفا کی آندھی سے وہ کب بجھائے جاتے ہیں

 

انہیں کو ملتی ہے اہلِ وفا کی سرداری

نبی کے نام پہ جو سر کٹائے جاتے ہیں

 

نبی کی نعت کا صدقہ جہاں میں جاتا ہوں

نیازیؔ میرے لیے دل بچھائے جاتے ہیں​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ