درِ نبی پہ نظر، ہاتھ میں سبوۓ رسولؐ

درِ نبی پہ نظر، ہاتھ میں سبوۓ رسولؐ

گدا سے پوچھیے شانِ  گداۓ کوۓ رسولؐ

 

ھے شمع شمع فروزاں، بہ فیضِ نورِ نبیؐ

مہک گلوں میں ھے رقصاں بہ لطفِ  بوۓ رسولؐ

 

خدا کو کیسے گوارا ھو آپ کی توھین

ھے آبروۓ خدا اصلِ آبروۓ رسولؐ

 

رھے جو ان سے گریزاں، خدا کا ھو نہ سکے

محال، الفتِ حق ھے بے آرزوۓ رسول

 

وہ رشکِ عرشِ  علی میں فقیرِ خاکِ  عجم

کہاں جبینِ عقیدت، کہاں وہ کوۓ رسولؐ

 

ھے حیف تجھ پہ جو اک جاں نثار کر نہ سکے

خدا نے کر دی خدائ نثارِ  روۓ رسولؐ

 

حسن نہ خوف سے محشر کے ایسا غمگیں ھو

کہ تجھ سے لاکھ کو کافی ھے ایک موئے رسولؐ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

بعد ثنائے ربِّ معظَّم، نعتِ نبی ہو جاری پیہم
باعثِ فخر ہے یہ خواب کی بات
خدا کی خاص رحمت اور کرم سے 
پھر قصیدہ حُسن کا لکھا گیا
شہِ بطحا کی یہ چوکھٹ ہے، پشیماں کیوں ہے
ہر گھڑی ہے تمنا یہی یا نبی
شجر کے دل میں گھاؤ کر گیا ہے
لبوں سے اسمِ محمد کا نور لف کیا ہے
اذاں میں اسمِ نبی سن لیا تھا بچپن میں
ترے نام کے نور سے ہیں منور مکاں بھی مکیں بھی

اشتہارات