اردوئے معلیٰ

Search

دریائے ہجر میں ہے سفینہ تِرے بغیر

کس کو پکاریں ماہِ مدینہ ! تِرے بغیر

 

کھائی ہو جس نے تیری ہوا، شہرِ مصطفٰی !

اُس کیلئے تو موت ہے جینا تِرے بغیر

 

اچھا ہوا کہ دل کی جگہ رکھ لیا تمہیں

ورنہ قرار پاتا نہ سینہ تِرے بغیر

 

سن کیسے لے گا تیرے بِنا کوئی بات رب

جب کوئی بات اُس نے کہی نا تِرے بغیر

 

جس کو نظر نہ آئے رُخِ قاسمِ ضیاء

نابینا ہی رہے گا وہ بینا تِرے بغیر

 

بخشا تِرے وجود نے اِس کو یہ مرتبہ

ورنہ ربیع بس ہے مہینہ تِرے بغیر

 

ہو نہ کرم تمہارا تو لکھتے ہوئے ثناء

آ جاتا ہے قلم کو پسینہ تِرے بغیر

 

یونہی تو راہ تیری نہیں دیکھتا یہ دل

یثرب کہاں بنا تھا مدینہ تِرے بغیر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ