در جاں چو کر منزل، جانانِ ما محمد

 

در جاں چو کر منزل، جانانِ ما محمد

صد در کشادہ در دل، ازجانِ ما محمد

 

ما بلبلیم نالاں در گلستانِ احمد

ما لولو ئیم و مرجاں، عمانِ ما محمد

 

مستغرقِ گناہیم ہر چند عُذر خواہیم

پژ مردہ چوں گیاہیم، بارانِ ما محمد

 

ما طالبِ خدائیم، بردینِ مصطفائیم

بر در گہش گدائیم، سلطانِ ما محمد

 

از دردِ زخم عصیاں ماراچہ غم چو سازو

از مرہم شفاعت، درمانِ ما محمد

 

امروز خونِ عاشق در عشق گرہد رشد

فردا زِ دوست خواہد تاوانِ ما محمد

 

از امتانِ دیگر ما آمدیم برسر

واں را کہ نیست باور برہانِ ما محمد

 

از آب و گل سرودے واز جان و دل در ودے

تا بشور بہ یثرب افغانِ ما محمد

 

در باغ و بو ستانم دیگر مخواں معینی

باغم بس است قرآں، بستانِ ما محمد

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

زینتِ قرآں ہے یہ ارشادِ ربُّ العالمیں
اے قبلۂ مقال مرے، کعبۂ نظر
ترے در پہ آنسو بہانے بہت ہیں
آیا ہے مجھ کو بُلاوا سُوئے شہرِ دلنشیں
مجملاتِ خَلق کی شرحِ مفصَّل آپ ہیں
کُن سے ماقبل کے منظر کی ہے تطبیق الگ
انجامِ طلب ، خواہشِ دیدار ہوا دل
کہتے ہیں سبھی دیکھ کے دربار تمہارا
حل ہے ہر اک مشکل کا
مرے دل میں یونہی تڑپ رہے مری آنکھ میں یونہی نم رہے