در دلِ ما غمِ دنیا غمِ معشوق شود

در دلِ ما غمِ دنیا غمِ معشوق شود

بادہ گر خام بوَد، پختہ کند شیشۂ ما

 

ہمارے دل میں غمِ دُنیا بھی غمِ محبوب

بن جاتا ہے، شراب اگر کچی ہو (غمِ

دنیا) تو ہمارا شیشۂ دل اُسے

پختہ شراب (غمِ محبوب) بنا دیتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ