اردوئے معلیٰ

Search

دعا ہے زندگی جب تک مری سفر میں رہے

حبیبِ پاک کا جلوہ ہی چشمِ تر میں رہے

 

حضور آپ کی سیرت ہو رہنمائے حیات

حضور آپکا اسوہ مری نظر میں رہے

 

کسی کی روح کا سامان ہو جو طیبہ میں

بتا اے گردشِ دوراں وہ کس نگر میں رہے

 

یہ عشق و وصل کے دعوے ہمیں نہیں زیبا

یہی بہت ہے کہ ہم اُن کی رہگزر میں رہے

 

درودِ پاکِ نبی اور مدحتِ آقا

ہمیشہ روشنی بن کر ہمارے گھر میں رہے

 

ہیں عقل والے پریشاں ترے اشاروں پر

دلِ صحابہؓ لٹے کیسے کس اثر میں رہے

 

یہ بندہ پروری ان کی ہے عجز ہے کیا ہے

کہ بن کے عرش کے مہماں دلِ بشر میں رہے

 

عطا ہو ان کی تو پھر حسنِ نعتِ پاک شکیلؔ

عجب نہیں ہے اگر دستِ بے ہنر میں رہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ