اردوئے معلیٰ

دعا ہے گلشنِ طیبہ میں روز جانے کی

دعا ہے گلشنِ طیبہ میں روز جانے کی

وہاں رکھوں گا میں بنیاد آشیانے کی

 

مری طلب ہے کہ جا کے مدینہ بس جاؤں

جگہ ذرا سی ملے مجھ کو سر چھپانے کی

 

بسا لو دل میں محبت حضور کی یارو

جنہیں ہو آرزو جنت میں گھر بنانے کی

 

مدینے مجھ کو بھی لے کے چلو خدا کے لئے

پڑی ہوئی ہے مجھے حالِ دل سنانے کی

 

دیارِ طیبہ میں جا کر فداؔ عقیدت سے

تمنا دل میں ہے نعتِ نبی سنانے کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ