اردوئے معلیٰ

Search

دلوں سے غم مٹاتا ہے محمد نام ایسا ہے

نگر اجڑے بساتا ہے محمد نام ایسا ہے

 

انہی کے نام سے پائی فقیروں نے شہنشاہی

خدا سے بھی ملاتا ہے محمد نام ایسا ہے

 

انہی کے ذکر سے روشن راتیں پھر لوٹ آتی ہیں

نصیبوں کو جگاتا ہے محمد نام ایسا ہے

 

درودوں کی مہک سے محفلیں آباد رہتی ہیں

میری نعتیں سجاتا ہے محمد نام ایسا ہے

 

محبت کے کنول کھلتے ہیں انکو یاد کرنے سے

بڑی خوشبوئیں لاتا ہے محمد نام ایسا ہے

 

مدد حاصل ہے مجھ کو ہر گھڑی شاہِ مدینہ کی

میری بگڑی بناتا ہے محمد نام ایسا ہے

 

میں فخری فکر دنیا و آخرت سب بھول جاتا ہوں

مجھے جب یاد آتا ہے محمد نام ایسا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ