اردوئے معلیٰ

Search

دلِ عشاق شہرِ نور سے آیا نہیں کرتے

یہ دیوانے غمِ فرقت سے گھبرایا نہیں کرتے

 

سحابِ نور چہرے کی نظافت دیکھنے آتے

وہ ہم جیسوں کے سر پر تو کبھی آیا نہیں کرتے

 

مدینے میں چلو یارو جنھیں غم نے ستایا ہے

سنا ہے غم دیارِ نور میں آیا نہیں کرتے

 

عمل پیرا نہیں ہوتے کبھی سیرت پہ جو مسلم

سنا ہے دو جہاں میں وہ سکوں پایا نہیں کرتے

 

محمد کے فقیروں میں کمالِ حُسن یہ دیکھا

غذا وہ غیر کے سونے کی بھی کھایا نہیں کرتے

 

کمالِ حوصلہ انکے نواسوں کا یہ دیکھا ہے

کہ پیاسے بھی سرِ مقتل وہ گھبرایا نہیں کرتے

 

سرِ محشر شفاعت ان کی ہونا کیسے ممکن ہے

لبوں پر نام جو سرکار کا لایا نہیں کرتے

 

نہیں ملتی ہمیں راحت سوا انکے مدینے کے

سکونِ دل مدینے کے سوا پایا نہیں کرتے

 

لحد سے ڈر نہیں قائم وہاں منکر نہیں ہوتے

فرشتے خادمِ مدحت کو تڑپایا نہیں کرتے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ